IPRI – The Islamabad Policy Research Institute

birlikte yaşadığı günden beri kendisine arkadaşları hep ezik sikiş ve süzük gibi lakaplar takılınca dışarıya bile çıkmak porno istemeyen genç adam sürekli evde zaman geçirir Artık dışarıdaki sikiş yaşantıya kendisini adapte edemeyeceğinin farkında olduğundan sex gif dolayı hayatını evin içinde kurmuştur Fakat babası çok hızlı sikiş bir adam olduğundan ve aşırı sosyalleşebilen bir karaktere sahip porno resim oluşundan ötürü öyle bir kadınla evlenmeye karar verir ki evleneceği sikiş kadının ateşi kendisine kadar uzanıyordur Bu kadar seksi porno ve çekici milf üvey anneye sahip olduğu için şanslı olsa da her gece babasıyla sikiş seks yaparken duyduğu seslerden artık rahatsız oluyordu Odalarından sex izle gelen inleme sesleri ve yatağın gümbürtüsünü duymaktan dolayı kusacak sikiş duruma gelmiştir Her gece yaşanan bu ateşli sex dakikalarından dolayı hd porno canı sıkılsa da kendisi kimseyi sikemediği için biraz da olsa kıskanıyordu

ARTICLE

مقبوضہ کشمیر واقعات ۔۔ ذمہ دار کون ؟

پانچ دسمبر 2014 کو مقبوضہ ریا ست کے ’’ اوڑی ‘‘ سیکٹر میں قابض بھارتی فوج کے ایک کیمپ پر حملے کے واقعہ میں لیفٹیننٹ کرنل ’’ سنکلپ کمار شکلا ‘‘ سمیت 11 بھارتی فوج کے افسر اور اہلکار مارے گئے ۔ اپنی دیرینہ روایت کے عین مطابق بھارتی حکمرانوں نے اس ضمن میں پاکستان اور اس کے اداروں کو ذمہ دار ٹھہرانے کی مذموم مہم شروع کر دی اور اس ضمن میں طرح طرح کے فسانے گھڑے جا رہے ہیں۔
اس پس منظر کا جائزہ لیتے ماہرین نے کہا ہے کہ ریاست جموں کشمیر کا مجموعی رقبہ 86 ہزار مربع میل ہے ۔جس میں سے 63 فیصد علاقہ گزشتہ پچپن برسوں سے بھارت کے ناجائز تسلط میں ہے اور اسی تنازعے کی وجہ سے بھارت اور پاکستان میں کئی ibgبار کھلی جنگوں کی نوبت آچکی ہے اور اس وقت بھی جنوبی ایشیا میں جاری تناؤ اور کشیدگی کی وجہ بھی یہی مسئلہ ہے ۔کیونکہ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی منظور کردہ قراردوں کے باوجود بھارتی حکمران ایک کروڑ سے زائد کشمیری عوام کو اپنے مستقبل کا فیصلہ خود کرنے کا حق استصواب رائے دینے پر آمادہ نہیں اور اپنی ریاستی دہشت گردی کے بل بوتے پر اپنے ناجائز تسلط کو طول دینے پر آمادہ ہیں ۔ہندوستان نے اپنے مذموم عزائم کی تکمیل کی خاطر ایک ہمہ جہتی حکمت عملی اپنا رکھی ہے ۔ایک جانب سات لاکھ سے زائد مسلح افواج کی مدد سے مظلوم عوام پر ہر طرح کا ظلم و ستم روا رکھا جارہا ہے اور دوسری جانب سیاسی اور سفارتی محاذ پر عالمی رائے عامہ کو گمراہ کرنے کی خاطر مختلف مواقع پر طرح طرح کے ہتھکنڈوں کو اپنا وطیرہ بنا رکھا ہے ۔ ۔اسی پس منظر میں مودی نے وزیر اعظم کا عہدہ سنبھالنے کے بعد گذشتہ چند مہینوں میں آٹھ بار مقبوضہ کشمیر کا دورہ کیا ہے۔ 
اس ضمن میں ان دنوں مقبوضہ کشمیر میں کٹھ پتلی اسمبلی کے انتخابات کا ڈھونگ رچایا جائے گا اور دنیا کو باور کرانے کی کوشش کی جائے گئی کہ مقبوضہ ریاست بھی بھارت کے دوسرے صوبوں کی طرح بھارتی فیڈریشن کا حصہ ہے ۔یہ انتخابات پانچ مختلف مراحل یعنی 25 نومبر ، 2 دسمبر ، 9 دسمبر ، 14 دسمبر اور آخری مرحلہ 20 دسمبر کو ہونا طے پایا ہے جن میں سے پہلے تین مرحلے مکمل ہو چکے ہیں جبکہ نتائج 23 دسمبر کو سامنے آئیں گے ۔ 
یہ امر بھی قابلِ توجہ ہے کہ مئی کے آخری ہفتے میں اقتدار سنبھالنے کے بعد سے مودی حکومت مسلسل اس کوشش میں لگی ہے کہ کسی بھی طور مقبوضہ ریاست یہ نام نہاد اسمبلی میں سادہ اکثریت حاصل کر کے وہاں BJP کی حکومت بنا لے ۔ اسی وجہ سے مودی اب تک مقبوضہ کشمیر کے 8 دورے کر چکے ہیں اور اپنے اس ہدف کی تکمیل کو موصوف نے مشن 44 کا نام دے رکھا ہے یعنی 87 رکنی اسمبلی میں کم از کم 44 سیٹیں حاصل ہو سکیں ۔ 
آزادی پسند کشمیری قائدین کو دفاعی پوزیشن اختیار کرنے پر مجبور کرنے کی خاطر ممکنہ طور پر خود بھارتی خفیہ اداروں نے تشدد کے حالیہ واقعات کرائے ہیں ۔ جس طرح اس سے پہلے 13 دسمبر 2001 کو خود بھارتی اداروں نے ہندوستانی پارلیمنٹ پر ibg 2حملے کا ناٹک رچایا اور اس کی آڑ لے کر پاکستان سے کسی حد تک سفارتی تعلقات تک منقطع کر لئے ۔’’ پی آئی اے ‘‘ کو بھارتی فضا کے استعمال سے روک دیا گیا اور بین الاقوامی سرحد اور ایل او سی پر پانچ لاکھ بھاتی فوج اور تین آرمڈ ڈویژن حملے کے لئے تعینات کر دیئے گئے ۔ یہ الگ بات ہے کہ پاکستان کی روایتی اور غیر روایتی جنگی صلاحیتوں کی بنا پر بھارت کو حملہ کرنے کی جرات نہ ہوئی ۔ اس ضمن میں تب عالمی برادری نے بھی خاصا فعال کردار ادا کیا تھا مگر اس معاملے کا یہ پہلو زیادہ قابل توجہ ہے پارلیمنٹ پر مبینہ حملے کے اس مقدمے کی سماعت کے بعد خود بھارتی عدالتوں نے تسلیم کیاکہ اس واقع میں مبینہ طور پر ملوث تمام کردار ہندوستان یا مقبوضہ کشمیر کے شہری تھے۔علاوہ ازیں بھارتی وزارتِ داخلہ کے سیکرٹری لیول کے افسر ’’ ستیش اگروال ‘‘ نے بھی اپنے بیان حلفی میں اس بھارتی ڈرامے کا پردہ چاک کیا تھا ۔تبھی تو بھارت کی داخلی سیاست پر نگاہ رکھنے والے اکثر مبصرین کی رائے ہے کہ مقبوضہ کشمیر میں ہونے والے حالیہ واقعات کے پس پردہ بھارت کے نیشنل سیکورٹی ایڈوائزر اجیت ڈووال اور ’’ بی ایس ایف ‘‘ کے ڈ ی جی ’’ دیوندر کمار پاٹھک ‘‘ ہیں کیونکہ خود بھارتی میڈیا نے انکشاف کیا ہے کہ گذشتہ دو ماہ میں انڈین پرائم منسٹر نے دو سے زائد مرتبہ ’’ بی ایس ایف ‘‘ سربراہ ’’ پاٹھک ‘‘ سے براہ راست اور بالمشافہ ملاقات اور طویل گفتگو کی ہے جبکہ اس سے پہلے آج تک کسی بھارتی پرائم منسٹر نے ’’ بی ایس ایف ‘‘ کے سربراہ سے ڈائرکٹ گفتگو نہیں کی بلکہ ہوم سیکرٹری یا ہوم منسٹر کے توسط سے بات چیت ہوتی رہی ہے ۔مندرجہ بالا تجزیے سے اس خدشے کو تقویت ملتی ہے کہ حالیہ وارداتوں کے پس پردہ خود دہلی کا اقتدار اعلیٰ اور سیکورٹی اسٹیبلشمنٹ ہے۔

دس دسمبر کو روزنامہ پاکستان میں شائع ہوا ۔
(مندرجہ بالا تحریر مصنف کے ذاتی خیالات ہیں جس کے لئے اسلام آباد پالیسی ریسرچ انسٹی ٹیوٹ یا کوئی بھی دوسرا ادارہ ذمہ دار نہیں )

RELATED
ARTICLES.

Scroll to Top

Search for Journals, publications, articles and more.

Subscribe to Our newsletter